آج نہ جانے کیوں مجھے

آج نہ جانے کیوں مجھے

کچھ چہرے مدھم مدھم سے

کچھ آنکھیں پرنم پرنم سی

یاد آیئں.

کچھ دکھ بکھرے بکھرے سے

کچھ خوشیاں بھیگی بھیگی سی

یاد آیئں

تنہا تنہا دیپ جلیں

ان آنکھوں کے ساگر پے

کچھ سایے ہلکے ہلکے سے

کچھ یادیں بہکی بہکی سی

یاد آیئں

.

اتنے برسوں کی یادوں کو

امید پے قائم خوابوں سے

میں کتنا سینت سینت رکھوں

خوشیوں کے اجڑے پھولوں کو

آنکھوں کے کڑوے پانی سے

میں کتنا سینچ سینچ سکوں

شکوہ فقط اس بات کا ہے

میرے دل کی مردہ بستی میں

نوروز چراغاں ہو نہ سکا

میرے من کے ویران کھنڈر میں

جشن بہاراں ہو نہ سکا

شہریار خاور

You may also like

No Comments

  1. I will right away snatch your rss feed as I can’t in finding your e-mail subscription link or e-newsletter service.
    Do you have any? Kindly let me recognize in order that I may
    subscribe. Thanks.

    1. Dear Jason, I am flattered by your interest. I have rechecked the settings and the email link is present. Can you please try to log on the blog from a computer or laptop instead of a smart phone. I am sure, that will solve the problem. Again, thanks for the interest

Leave a Reply