تم میرے ہو

تم میرے ہو

لوگ یہ مانتے ہیں.

تم میرے ہو

لوگ یہ کہتے ہیں

تم میرے ہو

ہم یہ جانتے ہیں

تم میرے ہو

ہم یہ سہتے ہیں

میرے ہو تو

اتنے دور کیوں ہو؟

میرے ہو تو

اتنے مغرور کیوں ہو؟

دور ہونا، مغرور ہونا

اپنوں کا نہیں، اغیار کا شیوہ ہے

دور ہونا، مغرور ہونا

تعلق کا نہیں، رسموں کا پیشہ ہے

میرے ہو تو

میرے پاس آ جاؤ

میرے ہو تو

میرے ھمدم بن جاؤ

میرے ہو تو اتار کے پھینک دو

طوق ے غلامی دنیا کا

میرے ہو تو جھپٹ کے پھاڑ دو

خلعت ے کردارزمانہ کا

میرے ہو تو

بس سب چھوڑ دو

یہ دنیا، اس کی فرسودہ رسومات

میرے ہو تو

بس سب توڑ دو

یہ زمانہ، اس کی فروزاں آسیشات

میرے ہو تو بس صرف میرے ہو

میرے ہو تو بس صرف میرے ہو

شہریار خاور

You may also like

No Comments

  1. شہریار خاور صاحب کوئی ایک نہیں تمام تر تحریریں ہی بہت عمدہ ہیں بہت ہی خوبصورت دل موح لینے والی ”نوراں کنجری” ہو یا ”محبت ضرورت اور بلھے شاہ” سرکار کیا ہی بات ہے آپ کے لئے دعا گو ہوں اور درخواست خوار ہوں کہ مجھے بھی اپنی دعاؤں میں یاد رکھئے گا۔

  2. Hello admin, i must say you have very interesting
    articles here. Your website should go viral. You need
    initial traffic only. How to get it? Search for;
    Mertiso’s tips go viral

Leave a Reply