ہم دونوں

ہم دونوں

ہم دونوں

گزرے وقتوں کی

عشقیہ داستانوں کے

کردار نہ سہی

انسان تو ہیں

عشق مجازی کی

پہچان تو ہیں

دل کی دنیا پر

حکمران تو ہیں

#urdu #poem #poetry #love #union #mohabbat #ishq 

ہم دونوں

اکیلے انسان

کہ جن میں

محبّت کرنے کا جذبہ

ایک ہونے کی خواھش

لازوال بھی ہے

بےمثال بھی ہے

خوف فراق بھی ہے

خواہش وصال بھی ہے

 

بات ہوتی ہے

عشق کرنے کی

ایک ہونے کی

مگرعشق کرنے سے

ایک ہونے سے

روکنے والی

سنگلاخ دیواریں

اور بھی ہیں

قہر کی اقدار

اور بھی ہیں

 

دیواریں کہ جن کی اساس

آہنی چٹانیں ہیں

قہر کہ جن کی بنیاد

حسد کے فسانے ہیں

دیواریں جو

صدیوں سے ایستادہ ہیں

اقدار جو ظلم کا

فرستادہ ہیں

 

ہم دونوں

بےبس وناچار ہی سہی

کمزورو لاچار ہی سہی

مگر ہماری طاقت

لامحدود محبّت ہے

ہماری قوّت

ہمیشہ روشن امید قربت ہے

ایک ہونے کی خواھش ہے

 

ایک ہونے کا مطلب

جسموں کا ملاپ بھی

روحوں کا اتصال بھی

ایک ہونے کا مطلب

ساکت پانیوں میں

عکس ماہتاب بھی

فضاؤں میں بکھرتی

خشبوئے گلاب بھی

 

آؤ عہد کریں

دیوار ظلم ڈھانے کا

جبر کو مٹانے کا

محبّت کرنے کا

ایک ہونے کا

آؤ عہد کریں

باد مخالف سے لڑنے کا

فاصلے عبور کرنے کا

لازوال ہونے کا

بے مثال ہونے کا

 

آؤ پھر عہد کریں

پھر اس عہد کی

تجدید کریں

اور کرتے رہیں

کہ مجھے تم سے محبّت ہے

کہ تمھیں مجھ سے محبت ہے

You may also like

No Comments

  1. I must say that somehow I can truly visualize the whole story described….. and it feels close….. too close to home.

    I showed this to my “Friend with Benefits”. Try to guess what her Question was..???

Leave a Reply to Mueen Kanwar Cancel reply