Saudade

winter_in_vienna_xxx_by_michela_riva_d4q22aj-fullview

‘Tell me why you are here?’ I caressed the back of her delicate hand like one caresses a dead bird – a last gesture of useless kindness.

‘Tell me why you are here….. with me…….in this very moment?’

‘I really do not know.’ A tiny smile danced around the corners of her lips. She peered into my eyes looking for an answer or perhaps solace. Then she looked away.

Continue reading

کلو حرامی اور پلیٹ فارم نمبر چار

محلے کے لوگ بتاتے ہیں کہ جس دن کلو حرامی کی ماں فوت ہوئی، اس کی آنکھوں سے ایک آنسو بھی نا نکل سکا. دیدے ایسے خشک پڑے تھے کہ جیسے، بارش کی بوندوں کے انتظار میں، تڑخی ہوئی اور باریک باریک دراڑوں والی سوکھی زمین. پڑوس کی ماسی بشیراں نے تو دونوں گال، تھپڑ مار مار کر لال سرخ بلکہ جامنی کر دیئے، مگر کلو نے تو جیسے قسم کھا رکھی تھی نا رونے کی. بس سرخ اینٹوں سے بنے چھوٹے سے صحن کے ایک کونے میں بیٹھا، لال لال آنکھوں سے گھورے جاتا تھا ہر آنے جانے والے کو

Continue reading